جیت جاتا ہوں میں ہار جاتا ہے دل


Image

                                 

سنو زندگی ہاتھ  تھاموں میرا

مجھ کو اس رہ  پر خار سے دور  تم لے چلو

اس جگہ جہاں چند لمحے سہی 

جی سکوں

کہ یہاں یاد کے  سا ے  گہرے ہے اتنے

کہ کچھ بھی سجھائی  دکھائی نہیں دے رہا ہے مجھے

ہر قدم پر گئے وقت کے تذکرے

جن سے ٹکرا کے میں اگرچہ گرتا نہیں

لڑکھڑاتا تو ہوں

اور یہ  لڑکھڑاہٹ  اذیت بھری  ایک سچائی ہے

جس میں گرنے  سمبھلنے کی  اس مختصر سی جنگ  میں

جیت جاتا ہوں میں

 ہار جاتا ہے دل  

 

Advertisements

About Aisha Chaudhary

A Person Who's Friend of Thousands But Herself Friendless! A Self-Imposed Cursed And A Blessing in Disguise
This entry was posted in Uncategorized and tagged , . Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s